Tag Archives: فیس بک

فیس بک کا واٹس ایپ سے کمائی کرنیکا فیصلہ


کیلی فورنیا: (ویب ڈیسک) فیس بک نے واٹس ایپ سے کمائی کرنے کا حتمی فیصلہ کر لیا ہے۔ فیس بک اس سروس کو استعمال کرنے والے عام صارفین سے کچھ نہیں لے گا لیکن اسے کاروباری مقاصد کیلئے استعمال کرنے والے وٹس ایپ کو ادائیگی کریں گے۔ رپورٹس کے مطابق واٹس ایپ اب اپنی بزنس اے پی آئی کو بڑھا رہا ہے۔ یہ اے پی آئی کمپنیوں کو

صارفین سے رابطہ کرنے کی سہولت دیتی ہے۔ اب کمپنیاں صارفین کو معلومات، جیسے تصدیقی پیغامات اور بورڈنگ پاس بھیج سکیں گی۔ کمپنیاں صارفین کو رئیل ٹائم سپورٹ بھی فراہم کریں گی اور اپنی سائٹ پر کلک ٹو چیٹ بٹن سے سوالات کے جوابات بھی فراہم کر سکیں گی۔ یہ بالکل فیس بک کے میسنجر پلگ ان کی طرح کام کرے گا۔ وٹس ایپ کمپنیوں کو 24 گھنٹوں تک صارفین سے مفت رابطے کی سہولت دے گا۔ اس کے بعد کمپنی فیس بک کو فی میسج فکسڈ ریٹ سے ادائیگی کریں گی۔ یہ ریٹ مختلف ممالک میں مختلف ہو گا۔ اس اے پی آئی کو کسٹمر ریلیشن شپ منیجمنٹ ٹولز جیسے Twilio اور Zendesk کے ساتھ بھی مربوط کیا جا سکے گا۔اس طریقے سے وٹس ایپ سست رفتار کمپنیوں سے زیادہ پیسے کمائے گا۔ اس کےعلاوہ کمپنیاں بھی تیزی سے صارفین کے سوالوں کےجواب دیں گی۔ وٹس ایپ نے اپنی انٹرپرائز سروس کا آغاز ستمبر 2017 میں کیا تھا۔ یہ اس وقت مفت سروس تھی۔ اس کے بعد اس کے لیے الگ اینڈروئیڈ ایپ سامنے آئی، جہاں کمپنیاں اپنا پروفائل بنا کر صارفین سے رابطہ کر سکتی ہیں۔ جنوری میں جب یہ ایپ سامنے آئی تھی تو کمپنی نے بتایا تھا کہ شروع میں یہ مفت ہوگی لیکن بعد میں اس کے استعمال میں فیس اداکرنا ہوگی۔ 24 گھنٹوں بعد جوابات کے علاوہ وٹس ایپ کمپنیوں سے ایک سے زیادہ کسٹمر سروس آفیسرز پر بھی فیس

وصول کر سکتا ہے۔وٹس ایپ اپنی ایپلی کیشن کے ذریعے پے منٹس وصول کرنے پر بھی کمپنیوں سے چارجز وصول کر سکتا ہے۔

پاکستان سمیت دنیا بھر میں فیس بک سروس کی بندش


لاہور (نیوزڈیسک) پاکستان سمیت دنیا بھر میں فیس بک سروس کی بندش، دنیا بھر کے اربوں صارفین شدید متاثر، حالیہ تاریخ میں یہ فیس بک کا سب سے بڑا تعطل ہے۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان سمیت دنیا بھر میں فیس بک سروس کی بندش خبریں سامنے آئی ہیں۔ اطلاعات کے مطابق پاکستان کے علاوہ دنیا کے بیشتر ممالک میں فیس بک کی سروس کو بندش کا

سامنا کرنا پڑا۔ بظاہر فیس بک سروس تکنیکی وجوہات کے باعث بند ہوئی۔ فیس بندش کے باعث دنیا بھر میں موجود اربوں صارفین متاثر ہوئے۔ کہا جا رہا ہے کہ فیس بک کی یہ بندش حالیہ تاریخ میں سماجی رابطوں کی اس ویب سائٹ کا سب سے بڑا تعطل ہے۔

کم منافع کمانے پر فیس بک کو مقدمات کا سامنا


کیلی فورنیا: (نیوزڈیسک) کم منافع کمانے پر فیس بک اور کمپنی کے سرمایہ کاروں کے درمیان قانونی جنگ چھڑ گئی، فیس بک آمدنی کے حوالے سے غلط اعداد و شمار بتا کر عوام کو گمراہ کر رہی ہے۔ فیس بک اور کمپنی کے سرمایا کاروں کے درمیان قانونی جنگ، کمپنی کے کم منافع کمانے پر سی ای او مارک زکر برگ اور چیف فنانس آفیسر ڈیوڈوہینر کے خلاف

قانونی چارہ جوئی کردی۔ سرمایہ کاروں نے الزام لگایا ہے کہ فیس بک اور اس کے دو مینیجرز آمدنی میں اضافے کے حوالے سے گمراہ کن بیانات دے رہے ہیں۔ واضح رہے کہ چند روز قبل کمپنی کے حصص مارکیٹ میں 20 فیصد گر گئے تھے۔ امریکی عدالت میں سوشل میڈیا پر کم منافع کا یہ پہلا مقدمہ ہے جبکہ اس سے قبل بھی فیس بک کو ڈیٹا لیک سکینڈل پر درجنوں مقدمات کا سامنا ہے۔

اپنی ہی تدفین کے نام پر پیسے جمع کرنے کے لیے ایک شخص نے فیس بک پر اپنے مرنے کی جعلی تصاویر اپ لوڈ کردیں


تھائی لینڈ سے تعلق رکھنے والے ایک شخص کو اس وقت اپنے رشتے داروں اور دوستوں کے غیض و غضب کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔اس شخص نے فیس بک پر اپنے مرنے کی جعلی تصاویر اپ لوڈ کیں اور اپنی بیوی کی مدد سے اپنے دوستوں اور رشتے داروں سے تدفین کے نام پر پیسے جمع کیے۔ تاچاوت نامی شخص کے فیس بک دوستوں کے نزدیک وہ اچھا خاصا

صحت مند تھا لیکن اتوار کو وہ اس کی ”میت“ کی تصاویر دیکھ کر حیران رہ گئے۔ تصاویر میں اس کے نتھوں میں روئی بھی لگی نظر آ رہی تھی۔ان تصاویر کے ساتھ کیپشن میں ”ڈی ایکٹیویٹ سے پہلے آخری تصویر“ لکھا ہوا تھا۔تاچاوت کے دوست اور ساتھ کام کرنے والے ”اسے کیا ہوا“ کے کمنٹس ہی کرتے رہے۔کمنٹس کے جواب میں تاچاوت کی بیوی سب کو جواب دیتی رہی کہ انہیں بہت مدت سے کینسر اور دمہ تھا۔ جب لوگ کہتے کہ تاچاوت کہیں سے بیمار نہیں لگتا تھا تو اس کی بیوی کہتی کہ وہ صحت مند نظر آنے کی اداکاری کرتا تھا۔ تاچاوت کی موت کی خبر اس کے رشتے داروں اور دوستوں میں پھیل گئی تو سب اس کے گھر فون کر کے ان کا بھرپور ساتھ دینے کا یقین دلاتے۔حد تو یہ ہے کہ تاچاوت کی بیوی نے اپنی ساس کو فون کر کے بھی 20 ہزار بھات یا 600 ڈالر منگوا لیے تاکہ میت کو گاؤں لایا جا سکے۔ تاچاوت کی ماں نے اپنے گاؤں کے مندر میں آخری رسومات کی تیاری کا بھی کہہ دیا۔ اگلے دن تاچاوت کی میت گاؤں پہنچنی تھی جہاں اس کے رشتے دار آخری رسومات میں شرکت کے لیے موجود تھے۔ آخری رسومات کا وقت نکلنے لگا تو تاچاوت کے ایک کزن نے

انہیں فون کیا جو تاچاوت نے ہی اٹھایا فوراً بند کر دیا۔ تاچاوت کے فون اٹھانے سے ہی اس کے گھر والوں کو پتا چل گیا کہ یہ سب جھوٹ تھا۔ تاچاوت کی آخری رسومات کی تیاری کے لیے 60 ہزار یوان یا 1800 ڈآلر خرچ ہو چکا تھا، جو واپس نہیں مل سکتا تھا۔ اس جھوٹ پر تاچاوت کی ماں نے اپنے بیٹے اور بہو سے تعلق ختم کر دیا ہے۔ اس خبر نے تھائی لینڈ کی قومی خبروں میں بھی جگہ بنائی ہے۔ خبروں سے پتا چلا کہ تاچاوت شروع سے ہی جھوٹا اور لالچی ہے۔ اس کے ساتھ کام کرنے والے ایک شخص نے بتایا کہ جب تاچاوت کو پتا چلا کہ اس کا ایک دوست مندر میں خطیر رقم چندہ کرنے والا تو اس نے دوست کا بٹوہ چرا لیا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ تاچاوت نے ابھی تک فیس بک سے اپنی کوئی تصویر ڈیلیٹ نہیں کی۔ لیکن اپنی بیوی کے لکھے کیپشن کو تبدیل کرکے سوری لکھ دیا ہے۔ تاچا وت اور اس کی بیوی سوشل میڈیا پر خاموش ہیں لیکن ان کے دوست اور رشتے دار سوشل میڈیا پر اپنے غصے کا اظہار کر رہے ہیں۔ پولیس نے اس حوالے سے ابھی تک کوئی مقدمہ درج نہیں کیا ہے لیکن ایک مشہور وکیل کا کہنا ہے کہ تاچاوت اور اس کی بیوی کو 1 لاکھ 60 ہزار یوان یا 4800 ڈالر جرمانہ اور 10 سال کی قید ہو سکتی ہے۔ تاچاوت وہ پہلا شخص نہیں جس نے مرنے کے بہانے رقم اینٹھنے کی کوشش کی ہو، ہاں وہ اس طرح سے اپنی ہی ماں سے رقم لینے والا پہلا شخص ضرور ہو سکتا ہے۔

 

فیس بک کے بعد ٹویٹر کے شئیرز میں بھی کمی


لاہور: (نیوزڈیسک) فیس بک کے بعد ٹوئٹر پر بھی خطرے کی تلوار لٹکنے لگی، جعلی اکاؤنٹس کے خلاف کریک ڈاؤن مہنگا پڑگیا، شیئرز اکیس فیصد تک گر گئے۔ سوشل میڈیا کیلئے خطرے کی گھنٹی بج گئی، فیس بک کے بعد ٹوئٹر بھی زوال کا شکار ہو گیا۔ مئی سے اب تک سات کروڑ جعلی اکاؤنٹس کے خلاف کریک ڈاون مہنگا پڑ گیا، مارکیٹ میں اکیس

فیصد شیئرز ایک دن میں ہی گر گئے۔ کمپنی نے قابل اعتراض مواد اور غیر اخلاقی پوسٹ کرنے پر نو کروڑ اکاؤنٹ بند کرنے کا اعلان بھی کیا تھا جس کے بعد ٹوئٹر کا ماہانہ استعمال نہ کرنے والے صارفین کی تعداد دس لاکھ سے تینتیس کروڑ پچاس لاکھ تک پہنچ گئٰی۔

فیس بک نے ملی مسلم لیگ اور اللہ اکبر تحریک کے متعدد اکاؤنٹس غیر فعال کردیے


اسلام آباد(نیوزڈیسک) سماجی رابطوں کی ویب سائٹ فیس بک نے غیر رجسٹرڈ سیاسی جماعت ملی مسلم لیگ (ایم ایم ایل) اور اس کی حمایت کرنے والی رجسٹرڈ سیاسی جماعت اللہ اکبر تحریک سے منسلک متعدد فیس بک اکاؤنٹس غیر فعال کردیے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق فیس بک کی جانب سے پاکستان میں انتخابات میں مثبت رجحان برقرار رکھنے کے لیے ملی

مسلم لیگ کے متعدد فیس بک اکاؤنٹس کو غیر فعال کیا گیا ملی مسلم لیگ کے سوشل میڈیا انچارج طحٰہ منیب نے بتایا کہ ایم ایم ایل، اللہ اکبر تحریک کے پلیٹ فارم سے لڑنے والے 260 امیدواروں کی حمایت کر رہی ہے اور ہمارے ایک ہزار سے زائد کارکنان سوشل میڈیا پر انتخابی مہم چلانے میں مصروف تھے لیکن 4 سے 5 دن میں فیس بک انتظامیہ نے بغیر کسی وجہ کے ہمارے امیدواروں، حمایت یافتہ افراد، کارکنوں کے اکاؤنٹس بند اور غیر فعال کردیے۔ واضح رہے کہ ملی مسلم لیگ، کالعدم جماعت الدعوہ کا سیاسی گروپ ہے اور اسی وجہ سے وزارت داخلہ کی تجویز پر الیکشن کمیشن نے اس جماعت کو الیکشن میں حصہ لینے کے لیے رجسٹر نہیں کیا جس کے باعث ایم ایم ایل کے حمایت یافتہ امیدوار اللہ اکبر تحریک کے پلیٹ فارم سے عام انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں اس حوالے سے ایم ایم ایل کے سوشل میڈیا انچارج کا مزید کہنا تھا کہ ہمارے کارکنوں کی جانب سے متعدد مرتبہ اکاؤنٹس دوبارہ بنانے کی کوشش کی گئی لیکن انہیں بھی فیس بک کی جانب سے غیر فعال کردیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ ’ہم نے فیس بک کی ای مارکیٹنگ کے ذریعے ہزاروں روپے

انتخابی مہم میں خرچ کیے لیکن اس کے باوجود بغیر کسی اطلاع کے ہمارے اکاؤنٹس بند کردیے گئے‘۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے اس خدشے کا بھی اظہار کیا کہ ہوسکتا ہے ہمارے یہ اکاؤنٹس بھارت کے کہنے پر بند اور غیر فعال کیے گئے ہوں کیونکہ فیس بک پر بھارت کا اثر و رسوخ ہے۔طحٰہ منیب کا کہنا تھا کہ کچھ ماہ قبل سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بھی کشمیر سے متعلق ہمارے اکاؤنٹ کو مبینہ طور پر ’بھارتی قوانین کی خلاف ورزی‘ پر بند کردیا گیا تھا، یہ اکاؤنٹ پاکستان میں بنایا گیا تھا اور یہاں سے ہی اسے چلایا جارہا تھا جبکہ اس پر بھارتی قوانین کا اطلاق بھی نہیں ہوتا۔ انہوں نے اس معاملے پر حکومت کی جانب سے کسی قسم کا کردار ادا نہ کرنے پر تحفظات کا اظہار بھی کیا۔ایک سوال کے جواب میں طحہٰ منیب نے بتایا کہ ملی مسلم لیگ نے الیکشن کمیشن کی جانب سے رجسٹریشن نہ دینے کے فیصلے کے خلاف ایک مرتبہ پھر اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی ہے جس کی سماعت جلد متوقع ہے۔دوسری جانب اس معاملے پر ایم ایم ایل کے ترجمان تابش قیوم نے کہا ہے کہ سماجی رابطے کی ویب سائٹ نے بغیر کسی وجہ کے ایم ایم ایل، ان کے امیدوار اور کارکنان کے اکاؤنٹس غیر فعال اور ختم کردیے ان کا کہنا تھا کہ فیس بک نے نہ صرف ایم ایم ایل بلکہ عام اتنخابات میں حصہ لینے والی اللہ اکبر تحریک کے کچھ اکاؤنٹس بھی غیر فعال کیے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق تابش قیوم نے فیس بک کے اس اقدام کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ’آزادی اظہار رائے کا حق ہر انسان اور سیاسی جماعت کا بنیادی حق ہے اور الیکشن کے موقع پر ہر سیاسی جماعت انتخابی مہم کے لیے سوشل میڈیا کا استعمال کرتی ہے‘ان کا کہنا تھا کہ انتخابات کے وقت میں ایم ایم ایل کے امیدوار اور ورکرز کے اکاؤنٹس معطل کرنا نا انصافی ہے۔ تابش قیوم کا کہنا تھا کہ فیس بک انتظامیہ نے انتخابات 2018 میں سیاسی جماعتوں اور ان کے امیدواروں کے اکاؤنٹس کے خاص تحفظ کی ضمانت دی تھی انہوں نے کہا کہ ’ انتخابات میں اپنا پیغام پہنچانے کے لیے تمام سیاسی جماعتیں سماجی رابطوں کی ویب سائٹس کا استعمال کرتی ہیں اور اپنے ووٹرز کو پوسٹرز اور ویڈیو پیغام کے ذریعے متوجہ کرتی ہیں لیکن ایم ایم ایل سے بغیر کسی وجہ کہ یہ سہولت چھین لی گئی ہے واضح رہے کہ کچھ ماہ قبل فیس بک کے چیف ایگزیکٹو آفیسر (سی ای او) مارک زکربرگ نے اس بات پر روشنی ڈالی تھی کہ ان کی ترجیح ہوگی کہ ان کی سوشل ویب سائٹ مثبت بات چیت کی حمایت کرے اور پاکستان،، بھارت،، برازیل، میکسکو اور دیگر ممالک میں ہونے والے انتخابات میں کی جانے والی مبینہ مداخلت کو روکا جاسکے۔ اس سے قبل فیس بک انتظامیہ نے الیکشن کمیشن آف پاکستان سے بھی رابطہ کیا تھا اور انہیں 25 جولائی کو پاکستان میں ہونے والے عام انتخابات کے لیے ایک خاص ٹرینڈ بنانے کی پیش کش کی تھی۔اس کے ساتھ ساتھ یہ بھی پیش کش کی گئی تھی کہ سوشل میڈیا ویب سائٹ مختلف سیاسی جماعتوں کے جعلی اکاؤنٹس کی نشاندہی کرکے انہیں ختم کردے تاہم فیس بک کی پش کش کے جواب میں الیکشن کمیشن نے ابتدائی طور پر کہا تھا کہ ان کا کوئی آفیشل سوشل میڈیا پیج نہیں، تاہم وہ دیگر اراکین اور سینئر حکام سے مشاورت کے بعد فیس بک انتظامیہ کو جواب دیں گے۔۔۔۔۔اعجاز خان

فیس بک حکام کا فیس بک اور انسٹا گرام میں حیران کن فیچر متعارف کروانے کا فیصلہ


کیلی فورنیا(نیوزڈیسک) ::فیس بک حکام کا فیس بک اور انسٹا گرام میں حیران کن فیچر متعارف کروانے کا فیصلہ، فیس بک اور انسٹا گرام دونوں ہی بہت جلد ڈو ناٹ ڈسٹرب کا آپشن پیش کر دیں گے۔تفصیلات کے مطابق فیس بک کو نہ صرف پاکستان بلکہ دنیا کی چند بہترین سوشل ویب سائٹس میں شمار کیا جاتا ہے۔ یہ نہ صرف دوستوں کو آپسی رابطے بڑھانے میں

مدد دیتی ہے بلکہ کمرشل بنیادوں پر بھی مفید ثابت ہوتی ہے۔ اگرچہ گزشتہ دنوں اٹھنے والے سکینڈل نے فیس بک کی ساکھ کو خاصا متاثر کیا تھا۔ فیس بک نے صارفین کا ذاتی ڈیٹا کاروباری مقاصد کے لیے استعمال کرنے کے سکینڈل کے باوجود فیس بک اپنی ساکھ بحال کرنے میں کامیاب ہو گیا ہے اور تاحال اپنی مقبولیت بنائے ہوئے ہے۔ فیس بک انتظامیہ ایپ کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ رکھنے کے لیے نت نئی تبدیلیاں کرتی رہتی ہے۔ ان تبدیلیوں کو عموما صارفین کی جانب سے بہت پسند بھی کیا جاتا ہے۔گزشتہ دنوں فیس بک انتظامیہ ایک نیا فیچر ’’ واٹس ایپ پر بھیجیں اور بریکنگ نیوز ‘‘ متعارف کرانے کا اعلان کیا تھا جس کی مدد سے فیس بک صارفین اپنے پسندیدہ مواد کو واٹس ایپ پر صرف ایک کلک کے ذریعے شیئر کر سکیں گے۔تازہ ترین اطلاعات کے مطابق فیس بک نے اپنے صارفین کے لیے ڈو ناٹ ڈسٹرب کا فیچر شروع کرنے کا فیصلہ کر لیا۔ اس آپشن کی بدولت ایپس پر 30 منٹ، ایک گھنٹے، دو گھنٹے، آٹھ گھنٹے، ایک دن اور خود اپنی مرضی سے نوٹیفیکیشن اوردیکھی جانے والی پوسٹوں کو بند کیا جاسکتا ہے۔ پھر یہ آپشن ازخود یا آپ خود ہی ختم کرسکتے ہیں۔

رپورٹس کے مطابق یہ دونوں فیچرزبعض اکاؤنٹس پر دیکھے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ نوٹفکیشن کےلیے آواز اور تھرتھراہٹ کے آپشنز بھی بند اور کھولے جاسکیں گے۔ ایک اطلاع کے مطابق فیس بک اورانسٹا گرام پر ان کی آزمائش کی جارہی ہے۔ اس آپشن کے ذریعے ایک جانب تو فیس بک اور انسٹا گرام سے وقتی طورپردوررہا جاسکتا ہے اوراس کا دوسرا مقصد یہ ہے کہ لوگوں کو فیس بک اورانسٹا گرام اکاؤنٹ ختم یا بند کرنے سے روکا جائے۔۔فیس بک حکام نے امید ظاہر کی ہے کہ اس فیچر کو صارفین کی جانب سے پسند کیا جائے گا۔

فیس بک نے اپنے فیچرز میں شاندار اضافہ کر دیا ہے


کیلی فورنیا (نیوزڈیسک) ::فیس بک نے اپنے فیچرز میں شاندار اضافہ کر دیا ہے۔آن دس ڈے کی طرز پر میموریز نامی فیچر متعارف کروایا گیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق فیس بک کو نہ صرف پاکستان بلکہ دنیا کی چند بہترین سوشل ویب سائٹس میں شمار کیا جاتا ہے۔ یہ نہ صرف دوستوں کو آپسی رابطے بڑھانے میں مدد دیتی ہے بلکہ کمرشل بنیادوں پر بھی مفید ثابت ہوتی

ہے۔ اگرچہ گزشتہ دنوں اٹھنے والے سکینڈل نے فیس بک کی ساکھ کو خاصا متاثر کیا تھا۔ فیس بک نے صارفین کا ذاتی ڈیٹا کاروباری مقاصد کے لیے استعمال کرنے کے سکینڈل کے باوجود فیس بک اپنی ساکھ بحال کرنے میں کامیاب ہو گیا ہے اور تاحال اپنی مقبولیت بنائے ہوئے ہے۔۔فیس بک انتظامیہ ایپ کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ رکھنے کے لیے نت نئی تبدیلیاں کرتی رہتی ہے۔ ان تبدیلیوں کو عموما صارفین کی جانب سے بہت پسند بھی کیا جاتا ہے۔گزشتہ دنوں فیس بک انتظامیہ ایک نیا فیچر ’’ واٹس ایپ پر بھیجیں اور بریکنگ نیوز ‘‘ متعارف کرانے کا اعلان کیا تھا جس کی مدد سے فیس بک صارفین اپنے پسندیدہ مواد کو واٹس ایپ پر صرف ایک کلک کے ذریعے شیئر کر سکیں گے۔ اس فیچر کی مدد سے ویڈیوز، تصاویر اور تحریریں شیئر کی جا سکیں گی۔ اس فیچر کے متعارف کرائے جانے کے بعد صارفین کسی بھی پوسٹ پر جا کر شیئر پر کلک کریں گے تو 3 آپشنز سامنے آتے ہیں جیسے ہی صارف ’’ واٹس ایپ پر بھیجیں ‘‘ آپشن کا انتخاب کریں گے تو ایک لنک سامنے آجاتا ہے جسے واٹس ایپ پر بھیجا جا سکتا ہے۔تازہ ترین خبر کے مطابق فیس بک نے اپنے فیچرز میں

ایک اور شاندار اضافہ کرنے کا اعلان کر دیا۔۔فیس بک حکام کے مطابق فیس بک نے ایک نیا فیچر متعارف کرادیا۔ فیس بک کا یہ فیچر پہلے ہی گزشتہ ایک سال سے صارفین کو کبھی کبھی اپنے ہوم پیچ پر نظر آتا تھا یا پھر ہر سہ ماہی یا ہر ماہ کے آخر میں فیس بک کی جانب سے اس فیچر کو صارفین کے ساتھ شیئر کیا جاتا تھا۔ تاہم اب اسے صارفین کی نیوز فیڈ میں ’آن دس ڈے‘ کی طرح فکس کردیا گیا ہے، اب صارف کسی وقت بھی اس فیچر کو کلک کرکے اپنی میموریز دیکھ سکیں گے۔ فوری طور پر اس فیچر کو تمام صارفین کے فیس بک پر شامل نہیں کیا گیا، تاہم جلد ہی یہ فیچر تمام صارفین کو اپنی نیوز فیڈ میں نظر آنے لگے گا۔۔فیس بک حکام نے امید ظاہر کی ہے کہ اس فیچر کو صارفین کی جانب سے پسند کیا جائے گا۔

نوجوانو ں تیزی سے فیس بک کا استعمال کر نا چھو ڑ رہے ہیں ، اس کی جگہ کس کا استعما ل کر نا شروع کر دیا ہے ، فیس بک با نی کیلئے انتہائی بر ی خبر


سان فرانسسكو(نیوز ڈیسک ) نوجوانوں میں فیس بک ترک کرنے کے رجحان میں 2015ء سے تیزی سے کمی واقع ہورہی ہے جب کہ انسٹا گرام اور اسنیپ چیٹ کے استعمال میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا میں کی گئی تحقیق میں انکشاف ہوا ہے کہ 2015ء کے مقابلے میں فیس بک کی مقبولیت میں کمی واقع ہوئی ہے اور

نوجوانوں میں فیس بک کو ترک کر کے سماجی رابطے کی دیگر ویب سائٹس کو استعمال کرنے کا رجحان دیکھا گیا ہے۔ نوجوانوں کی اولین پسند فیس بک کے بجائے اب یوٹیوب، انسٹاگرام اور اسنیپ چیٹ ہی ں۔امریکا کے نجی تحقیقاتی ادارے پیو ریسرچ سینٹر (Pew Research Center) کی جانب سے کیے گئے اس سال کے سروے میں حیران کن اعداد و شمار سامنے آئے ہیں۔ 2015ء میں اسی ادارے کی جانب سے کیے گئے سروے کے تقابلی جائزے سے پتا چلا کہ نوجوانوں میں فیس بک کا استعمال 71 فیصد سے گھٹ کر 51 فیصد رہ گیا ہے جب کہ نوجوانوں میں انسٹا گرام کی مقبولیت 52 فیصد سے بڑھ کر 72 فیصد اور اسنیپ چیٹ کی 41 فیصد سے بڑھ کر 69 فیصد ہوگئی ہے۔نوجوانوں میں فیس بک ترک کرنے کے رجحان کی تصدیق اس سے قبل فروری میں کی جانے والی ایک تحقیق سے بھی ہوئی تھی جس کے اعداد و شمار کے مطابق 12 سے 17 سال کی عمر کے نوجوانوں میں فیس بک کے استعمال میں 10 فیصد کمی دیکھی گئی تھی۔ موجودہ صورت حال کو دیکھتے ہوئے ریسرچ کمپنی کا دعویٰ ہے کہ آئندہ برس تک فیس بک کو 2.1 ملین صارفین سے

محروم ہونے کا امکان ہے۔واضح رہے کہ 2016ء میں ہونے والے امریکا کے صدارتی انتخاب کے دوران فیس بک صارفین کا ڈیٹا استعمال ہونے پر سماجی رابطے کی اس کامیاب ویب سائٹ کو مشکلات کا سامنا رہا ہے جب کہ یوٹیوب انسٹا گرام اور اسنیپ چیٹ کی مقبولیت میں اضافہ ہو رہا ہے۔

فیس بک نے اپنے فیچرز میں ایک اور شاندار اضافہ کرنے کا اعلان


کیلی فورنیا (نیوزڈیسک) ::فیس بک نے اپنے فیچرز میں ایک اور شاندار اضافہ کرنے کا اعلان کر دیا۔۔فیس بک حکام کے مطابق فیس بک نے ’بریکنگ نیوز‘ سیکشن متعارف کرانے کا فیصلہ کر لیا۔تفصیلات کے مطابق فیس بک کو نہ صرف پاکستان بلکہ دنیا کی چند بہترین سوشل ویب سائٹس میں شمار کیا جاتا ہے۔ یہ نہ صرف دوستوں کو آپسی رابطے بڑھانے میں

مدد دیتی ہے بلکہ کمرشل بنیادوں پر بھی مفید ثابت ہوتی ہے۔n اگرچہ گزشتہ دنوں اٹھنے والے سکینڈل نے فیس بک کی ساکھ کو خاصا متاثر کیا تھا۔ فیس بک نے صارفین کا ذاتی ڈیٹا کاروباری مقاصد کے لیے استعمال کرنے کے سکینڈل کے باوجود فیس بک اپنی ساکھ بحال کرنے میں کامیاب ہو گیا ہے اور تاحال اپنی مقبولیت بنائے ہوئے ہے۔۔فیس بک انتظامیہ ایپ کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ رکھنے کے لیے نت نئی تبدیلیاں کرتی رہتی ہے۔ ان تبدیلیوں کو عموما صارفین کی جانب سے بہت پسند بھی کیا جاتا ہے۔گزشتہ دنوں فیس بک انتظامیہ ایک نیا فیچر ’’ واٹس ایپ پر بھیجیں ‘‘ متعارف کرانے کا اعلان کیا تھا جس کی مدد سے فیس بک صارفین اپنے پسندیدہ مواد کو واٹس ایپ پر صرف ایک کلک کے ذریعے شیئر کر سکیں گے۔ اس فیچر کی مدد سے ویڈیوز، تصاویر اور تحریریں شیئر کی جا سکیں گی۔اس فیچر کے متعارف کرائے جانے کے بعد صارفین کسی بھی پوسٹ پر جا کر شیئر پر کلک کریں گے تو 3 آپشنز سامنے آتے ہیں جیسے ہی صارف ’’ واٹس ایپ پر بھیجیں ‘‘ آپشن کا انتخاب کریں گے تو ایک لنک سامنے آجاتا ہے جسے واٹس ایپ پر بھیجا جا سکتا ہے۔ تازہ ترین خبر کے مطابق

فیس بک نے اپنے فیچرز میں ایک اور شاندار اضافہ کرنے کا اعلان کر دیا۔۔فیس بک حکام کے مطابق فیس بک نے ’بریکنگ نیوز‘ سیکشن متعارف کرانے کا فیصلہ کر لیا۔۔ٹیکنالوجی ویب سائٹ میش ایبل کی رپورٹ کے مطابق فیس بک میں ٹرینڈنگ نیوز سیکشن کو ختم کر کے ’ بریکنگ نیوز ‘ سیکشن متعارف کیا جائے گا جس میں سب سے پہلے مقامی خبروں کو ترجیح دی جائے گی۔ اس کے لیے ’ٹوڈے اِن‘ فیچر کو بھی متعارف کیا جائے گا تاکہ تمام شہری اپنے ارد گرد کے حالات سے باخبر رہیں اور بریکنگ نیوز سے باخبر رہیں۔ ‘ٹوڈے اِن’ فیچر کی مدد سے صارفین مقامی تنظیموں کی اَپ ڈیٹس بھی معلوم کر سکیں گے۔اس فیچر میں صرف تصدیق شدہ خبریں ہوں گی جسے دنیا بھر کے صارفین استعمال کر سکیں گے۔