شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

سیاسی تہلکہ:عمران حکومت کو ایک اور جھٹکا ۔۔۔ عین موقع پر اتحادی جماعت نے راہیں جدا کرتے ہوئے بڑا اعلان کر ڈالا


لاہور (ویب ڈیسک) پاکستان عوامی تحریک کی حکومت اور اپوزیشن پر تنقید کر لی، خرم نواز گنڈاپور کہتے ہیں تبدیلی کا نعرہ کیا ہوا ؟؟؟ نواز شریف کو ضمانت ملی، غریب جیلوں میں بیماری سے مر رہے ہیں۔ مولانا فضل الرحمان تو پارلیمان میں مسائل حل کرنے کے دعویدار تھے۔ پاکستان عوامی تحریک کا آئندہ کا سیاسی لائحہ عمل تیار ہو گیا۔ بلدیاتی الیکشن

میں بھرپور حصہ لینے کا فیصلہ کر لیا۔ کارکنوں کو متحرک ہونے کا حکم بھی دے ڈالا، منہاج القران سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے پارٹی کے جنرل سیکرٹری خرم نواز گنڈا پور نے کہا کہ ڈاکٹر طاہر القادری سیاست نہیں کر یں گے۔ حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ تبدیلی کا نعرہ پورا نہ ہو سکا۔ دے لفظوں میں سیاسی کزنز سے اظہار لاتعلقی بھی کیا۔ نواز شریف کی ضمانت پر خرم نواز گنڈا پور بولے کہ کسی جمہوری ملک میں سزا یافتہ کو ضمانت ملنے کی کوئی مثال نہیں۔ غریب جیلوں میں مر رہے ان کی ضمانت نہیں ہوئی۔ خرم نواز گنڈا پور نے مولانا فضل الرحمان کو بھی آڑے ہاتھوں لیا۔ کہتے ہیں ہمارے دھرنے پر پارلیمان مین بیٹھ کر مسائل حال کرنے کی تقاریر کرنے والے خود اسمبلی سے باہر ہیں تو مسائل سڑکوں پر حل کرنا چا ہتے ہیں۔ پاکستان عوامی تحریک کے سیاسی فیصلوں کے لیے 12 افراد پر مشتمل سپریم کونسل کا اعلان کیا گیا۔ عوامی تحریک نے سیاسی کزن تحریک انصاف سے لاتعلقی کا اعلان کردیا، عوامی تحریک کے پہلے ہی اجلاس میں تحریک انصاف حکومت کی پالیسیوں پر شدید تنقید، پارٹی کے سیکرٹری جنرل کہتے ہیں کہ تحریک انصاف

سیاسی کزن تھی، تبدیلی کے نام پر ووٹ لیا، لیکن تبدیلی کہاں؟ پانچ سال بعد بھی سانحہ ماڈل ٹاؤن کے شہداء انصاف کے منتظر ہیں۔ ڈاکٹر طاہر القادری کی سیاست سے ریٹائرمنٹ کے بعد ماڈل ٹاؤن میں عوامی تحریک کے پہلے ہی اجلاس میں تحریک انصاف کی پالیسیوں کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سیکرٹری جنرل خرم نواز گنڈا پور کا کہنا تھا کہ جس تبدیلی کے نام پر تحریک انصاف نے نے ووٹ لیا سوا سال بعد کیا ہوا سب جانتے ہیں، پانچ سال ہوگئے ماڈل ٹاؤن کے شہداء کو انصاف نہیں ملا موجودہ حکومت کے سوا سالوں میں بھی سانحہ ماڈل ٹاؤن پر بھی پیش رفت نہ ہوسکی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ نظام عوامی مسائل کو حل کرنے میں ناکام رہا ہے، لیکن اس کے باوجود عوامی تحریک ہونے والے بلدیاتی انتخابات میں بھرپور شریک ہونگے۔ انہوں نے عوامی تحریک کے سیاسی لائحہ عمل طے کرنے کے لئے 12 رکنی سپریم کونسل کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ کونسل قائم کردی ہے جو آئندہ کا سیاسی مستقبل طے کرے گی۔ خرم نواز گنڈا پور نے کہا کہ موجودہ حکومت نے بیرون ملک لوٹا ہوا پیسہ واپس لانے کا دعوی کیا وہ پیسہ کہاں ہے،

ماسوائے نیب کے جنہوں نے چند افراد کے ساتھ پلی بارگیننگ کی اس کے علاوہ نیب اور حکومت کی کیا کارکردگی ہے۔ سپریم کونسل میں قاضی زاہد حسین، خرم نواز گنڈا پور، بشارت جسپال، فیاض وڑائچ، نوراللہ صدیقی ،قاضی شفیق، عارف چودھری، ظفر اقبال، خالد درانی، وڈیرہ سلطان الدین شہوانی، سردار منصور خان اور ریحان اقبال شامل ہیں۔





اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ ترین خبریں

دلچسپ و عجیب

بزنس