شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

ملکی سیاست میں نیا موڑ۔۔۔۔ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) نے وزیراعظم عمران خان کی حمایت کا اعلان کردیا


کراچی (ویب ڈیسک)وزیراعظم کے دورہ مظفر آباد کی پیپلزپارٹی اور ن لیگ نے بھی حمایت کردی وزیراعظم کے ترجمان ندیم افضل چن نے کہا ہے کہ ماضی جیسی سیاسی انجینئرنگ اب نہیں ہورہی ہے ن لیگ اور پیپلز پارٹی میں کوئی فارورڈ بلاک نہیں بن رہا ہے ن لیگ میں اس وقت بھی دو گروپس موجود ہیں، ایک گروپ کو شہباز شریف دوسرے کو مریم نواز لیڈ

کرتی ہیں، سندھ میں پیپلز پارٹی کے ایم پی ایز کا فارورڈ بلاک بن سکتا ہے ،بلاول بھٹو کبھی بھی مولانا فضل الرحمٰن کے ساتھ نہیں ہوں گے، وزیراعظم کو اپوزیشن کو بھی مظفر آباد ساتھ لے کر جانا چاہئے، مریم نواز جیل میں ہیں وزیراعظم چاہیں تو انہیں ساتھ نہیں لے جاسکتے ۔ وہ جیوکے پروگرام ”کیپٹل ٹاک“ میں میزبان حامد میر سے گفتگو کررہے تھے۔ پروگرام میں پیپلز پارٹی کی رہنما رخسانہ زبیری اور ن لیگ کے رہنما محمد زبیربھی شریک تھے۔سینیٹر رخسانہ زبیری نے کہا کہ سندھ میں پیپلز پارٹی کے اندر فارورڈ بلاک بنانا آسان کام نہیں ہے، سینیٹ میں پیپلز پارٹی سے کوئی ووٹ پارٹی ڈسپلن کیخلاف نہیں گیا، مولانا فضل الرحمٰن کو گرفتار کرلیا جاتا ہے تو اچنبھے کی بات نہیں ہوگی، وزیراعظم کے ساتھ مختلف پارٹیوں کے رہنماؤں کی کشمیر جانے کی تجویز اچھی ہے،کشمیری اس وقت بہت برے حال میں ہیں پاکستان کو جو ممکن ہو کرنا چاہئے۔محمد زبیر نے کہا کہ مریم نواز کشمیر بنے گا پاکستان ریلی کیلئے مظفر آباد جانا چاہتی تھیں وزیراعظم انہیں دعوت دیں، ن لیگ میں توڑ پھوڑ یا انجینئرنگ کا عمل جاری ہے، ن لیگ کا سینیٹر ہو یا رکن اسمبلی اسے انتہائی دباؤ

کا سامنا ہے، نواز شریف کا موقف واضح ہے ہمیں مولانا فضل الرحمٰن کے ساتھ کھڑے ہونا ہے، جے یو آئی کے دھرنے میں پیپلز پارٹی کے شرکت نہ کرنے کا نواز شریف کو بتائیں گے، دھرنے میں شرکت سے متعلق پارٹی مشاورت کر کے حتمی فیصلہ کرے گی۔وزیراعظم کے ترجمان ندیم افضل چن نے کہا کہ سیاسی انجینئرنگ ہو ، صحافتی انجینئرنگ ہو یا پیسوں کی انجینئرنگ اسے سراہا نہیں جاسکتا،جس طرح کی انجینئرنگ بھٹو صاحب کیخلاف تحریک، اسلامی جمہوری اتحاد اور مشرف دور میں پارٹی بنا کر کی گئی ویسی سیاسی انجینئرنگ اب نہیں ہورہی ہے، میرے خیال میں ن لیگ اور پیپلز پارٹی میں کوئی فارورڈ بلاک نہیں بن رہا ہے، ن لیگ میں اس وقت بھی دو گروپس موجود ہیں، ایک گروپ کو شہباز شریف دوسرے کو مریم نواز لیڈ کرتی ہیں، مسلم لیگیوں کی اکثریت اقتدار کے بغیر رہ نہیں سکتی ہے، پیپلز پارٹی سے سندھ میں ایم پی ایز کا فارورڈ بلاک بن سکتا ہے ،اگر حکومت پیپلز پارٹی میں فارورڈ بلاک بنواتی ہے تو غلط ہوگا، عمران خان کبھی کسی پارٹی میں فارورڈ بلاک بنانے کی تائید نہیں کریں گے۔ندیم افضل چن کا کہنا تھا کہ کسی بھی پارٹی کا

نظریاتی کارکن بددیانتی نہیں کرتا ہمیشہ دوستیوں والے ٹوٹتے ہیں، ٹوٹنے والے سینیٹرز کو ٹکٹ پارٹیوں نے نہیں دیئے انہیں دوستیوں میں ٹکٹ ملے تھے، پیپلز پارٹی کے بھی سینیٹرز ٹوٹے لیکن نظریاتی لوگ نہیں ٹوٹے ہوں گے،مولانا فضل الرحمٰن کی گرفتاری سے متعلق مجھے علم نہیں ہے، کسی بے گناہ کو گرفتار نہیں ہونا چاہئے، آج تک کوئی مولوی اور دائیں بازو کا سیاستدان احتساب میں قابو نہیں آیا ہے، شہباز شریف حبیب جالب کی نظمیں پڑھ کر قوم کو بیوقوف نہیں بناسکتے۔





اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ ترین خبریں

دلچسپ و عجیب

بزنس