شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

بریکنگ نیوز: امریکہ ہار گیا ، ایران جیت گیا ، عالمی منظر نامے پر ہلچل مچا دینے والی خبر


میڈرڈ (ویب ڈیسک) امریکہ کو بڑی سفارتی شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ جبرالٹر کی سپریم کورٹ کا ایرانی آئل ٹینکر چھوڑنےکا حکم نامہ جاری ہو گیا ۔ٹینکر گریس ون کی منزل عالمی پابندیوں کی زد میں آنیوالا ملک نہیں تھا،ایران کی تحریری ضمانت دے دی گئی ،تہران آبنائے ہرمزکے تحفظ کیلئے علاقائی ممالک سے مذاکرات پر تیار ہو گیا۔جبرالٹر کی سپریم کورٹ

نے قبضے میں لیاجانے والا ایرانی ٹینکر،چھوڑنے کاحکم دیدیا۔ چیف جسٹس انتھونی ڈوڈلے نے اپنے فیصلے میں کہا کہ ایران نے تحریری ضمانت دی ہے کہ ٹینکر گریس ون کی منزل ایسا کوئی ملک نہیں تھا جوکہ عالمی پابندیوں کی زد میں ہو ، اس لئے ٹینکر کو قبضے میں رکھنے کا کوئی جواز باقی نہیں رہتا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ٹربیونل کو امریکاکی جانب سے ٹینکر ضبط کرنے کی کوئی تحریری درخواست موصول نہیں ہوئی ۔ رپورٹ کے مطابق جہاز کے کپتان نے یقین دہانی کرائی کہ اس کاشام جانے کا کوئی ارادہ نہیں تھا ۔یاد رہے برطانوی نیوی نے یورپی یونین کی پابندیوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے شام کو تیل پہنچانے کے شبہ میں ایرانی ٹینکر 4جولائی کو قبضے میں لیا تھا ۔عالمی میڈیا جبرالٹر کی عدالت کے فیصلے کو امریکا کی ناکامی تصور کررہاہے ۔دوسری طرف ایرانی حکومت کے ترجمان نے کہا کہ تہران آبنائے ہرمز اور خلیج فارس کی سلامتی کے تحفظ کے لئے علاقے کے ملکوں کے ساتھ مذاکرات کے لئے تیار ہے ۔ ترجمان علی ربیعی نے کہا ایران خود کو علاقے کے اقتصادی و تجارتی راستوں کی سلامتی کے تحفظ کا ذمہ دار سمجھتا ہے ۔جبل الطارق کے

ذرائع ابلاغ نے خبر دی ہے کہ ایران کی حکومت سے باضابطہ تحریری یقین دہانیوں کے بعد کہ وہ اپنا کارگو شام میں نہیں اتارے گا، حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ ’گریس ون‘ نامی ایرانی سپرٹینکر کو سفر جاری رکھنے کی اجازت دی جائے۔جبرالٹر کرونیکل‘ نے 15 اگست کو ٹوئٹر پر بیان دیا ہے کہ ’’اس بنیاد پر، جبرالٹر کے وزیر اعلیٰ، فیبیان پکارڈو نے حراست میں لینے اور جہاز کو سفر سے روکنے کا حکم نامہ واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے‘‘۔اقدام سے متعلق اس خبر کے باوجود، آخری لمحات میں امریکہ نے کوشش کی کہ ایران اور برطانیہ کے درمیان آئل ٹینکر کے حوالے سے جاری تعطل برقرار رہے ۔امریکہ کی درخواست سے ’’چند ہی گھنٹے قبل، جبرالٹر کی حکومت نے ایرانی سپر ٹینکر کو چھوڑنے کا فیصلہ کر لیا تھا، جسے جولائی کے اوائل میں حراست میں لیا گیا تھا‘‘۔اخبار نے خبر دی ہے کہ ’’حکومت جبرالٹر کو ایرانی حکومت سے باضابطہ تحریری یقین دہانیاں موصول ہو گئی ہیں کہ جہاز اپنا کارگو شام میں نہیں اتارے گا‘‘۔تاہم، اس میں مزید کہا گیا ہے کہ ’’ابھی یہ بات واضح نہیں آیا جہاز جبرالٹر سے سفر شروع کرے گا یا یہ کہ ایسا ہونے سے قبل امریکہ اس عمل کو روکنے

کے لیے باضابطہ طور پر عدالت میں درخواست پیش کرے گا‘‘۔امریکی محکمہ انصاف نے اس معاملے پر بیان نہیں دیا،گریس ون‘ میں 2.1 ملین بیرل ایرانی تیل لے جایا جا رہا تھا۔ اور حکام نے الزام لگایا ہے کہ یہ عمل شام پر یورپی یونین کی جانب سے عائد تعزیرات کی خلاف ورزی کے زمرے میں آتا ہے۔ایران کا کہنا ہے کہ ٹینکر بین الاقوامی بحری حدود میں تھا اور شام نہیں جا رہا تھا۔ایرانی ٹینکر پکڑے جانے کے جواب میں 19 جولائی کو ایران کے پاسداران انقلاب نے ایک برطانوی آئیل ٹینکر، ’اسٹینا امپرو‘ کو حکمت عملی کے حامل ہرمز کے علاقے میں پکڑ لیا تھا، جو خیلج فارس کو خلیج اومان سے ملاتا ہے۔





اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ ترین خبریں

دلچسپ و عجیب

بزنس