شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

ترکی نے جو کہا کر دکھایا ۔۔۔ کشمیر کے حوالے سے ایسا دبنگ موقف کہ پوری دنیا حیران رہ گئی


انقرہ (ویب ڈیسک) ترک عوام نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی سکیورٹی فورسز کے حالیہ مظالم اور مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت غیر قانونی اور یکطرفہ طور پر ختم کرنے کی مذمت کی ہے اور کشمیر کے لئے بھرپور حمایت کے عزم کا اعادہ کیا ہے۔ جمعرات کو یہاں موصولہ پیغام کے مطابق انقرہ میں پاکستانی سفارتخانہ کے باہر 15 اگست کو بھارتی یوم

سیاہ منایا گیا جس میں ترکی کے شہریوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی اور کشمیری عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا۔ اس موقع پر اپنے خطاب میں ترکی میں پاکستان کے سفیر سجاد قاضی نے کشمیری عوام پر بھارتی مظالم، حالیہ لاک ڈائون اور کرفیو کے بارے میں بتایا اور کہا کہ کشمیریوں کو اپنا جائز حق خودارادیت مانگنے کی سزا دی جا رہی ہے۔ انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ کشمیریوں کی نسل کشی پر خاموش نہ رہا جائے اور بھارت پر دبائو ڈالا جائے کہ وہ کشمیری خصوصی حیثیت ختم کرنے کا اپنا حالیہ اقدام واپس لے۔ احتجاج کے آخر میں ترک شہریوں نے کشمیری شہداء کی یاد میں موم بتیاں روشن کیں ۔ یاد رہے کہ بھارت کے یوم آزادی کے موقع پر پر پاکستان ، آزاد کشمیر سمیت دنیا کے مختلف ممالک میں یوم سیاہ منایا گیا اور کشمیر پر بھارتی مظالم کیخلاف مظاہرے اور احتجاج ریکارڈ کروایاگیا ۔ جیونیوز کے مطابق بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی آئینی حیثیت تبدیل کرنے اور کشمیریوں پر ڈھائے جانے والے بھارتی مظالم کے خلاف سب سے بڑا احتجاجی مظاہرہ لندن میں بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے ہوا۔اس تاریخی احتجاج میں سیکڑوں مظاہرین نے شرکت

کی جبکہ وزیراعظم عمران خان کی خصوصی ہدایت پر معاون خصوصی برائے سمندر پار پاکستانی ذولفی بخاری مظاہرے کی قیادت کیلئے لندن پہنچے۔اس کے علاوہ وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید بھی مظاہرے میں شرکت کیلئے لندن میں موجود تھے۔وزیر اعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر نے بھی لندن میں بھارت مخالف مظاہرے میں حصہ لیا۔ احتجاج کے موقع پر بھارتی ہائی کمیشن کی سیکیورٹی انتہائی سخت رکھی گئی تھی۔برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمشنر نفیس زکریا کی جانب سے کشمیر کا مقدمہ پیش کیاگیا۔سکھ کمیونٹی نے بھی پاکستانیوں اور کشمیریوں کے ساتھ احتجاج میں حصہ لیا اور خالصتان کے پرچم بلند کئے ۔ اس موقع پر برطانیہ کے وزیر مملکت برائے خارجہ اور کامن ویلتھ ڈاکٹر اینڈریو مورسن سے برطانیہ میں پاکستان کے ہائی کمشنر محمد نفیس زکریا نے ملاقات کی اور انہیں بھارتی مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورتحال سے آگاہ کیا۔پاکستانی ہائی کمشنر نے انہیں مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کے حوالہ سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کے اقدامات سے خطے کی سلامتی کو شدید

خطرات کا سامنا ہے۔انہوں نے برطانوی وزیر مملک کی توجہ مقبوضہ جموں و کشمیر کی آبادیاتی حیثیت تبدیل کرنے کے بھارتی اقدامات پر مبذول کرائی اور کہا کہ بھارت مقبوضہ وادی کی مسلم اکثریت کو اقلیت میں بدلنا چاہتا ہے۔اینڈریو مورسن نے یقین دلایا کہ ان کا ملک مقبوضہ کشمیر کی صورتحال سے آگاہ ہے اور اس حوالہ سے شدید تشویش رکھتا ہے۔انہوں نے کہاکہ موجودہ حالات کے تناظر میں مسئلہ کشمیر کا جلد از جلدحل ضروری ہے ۔مقبوضہ کشمیر پر بھارتی قبضے اور وہاں جاری بھارتی مظالم کے خلاف بیلجیم کے دارالحکومت برسلز میں بھارتی سفارتخانے کے سامنے احتجاج کیا گیا۔پاکستانیوں اور کشمیریوں کی بڑی تعداد نے احتجاجی مظاہرے میں شرکت کی۔مظاہرین میں بھارتی شہری بھی شامل ہیں تھے جنہوں نے مودی حکومت کے اقدام کے خلاف احتجاج کیا اور اس عمل کی شدید مذمت کی ۔





اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ ترین خبریں

دلچسپ و عجیب

بزنس