شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

علی ظفر نے میشا شفیع کے خلاف ثبوت پیش کردیے


لاہور (نیوزڈیسک) لاہور کی مقامی عدالت میں گلوکارہ میشا شفیع کے خلاف ہتک عزت کیس کی سماعت ہوئی۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ لاہور کی سیشن عدالت میں ایڈیشنل سیشن جج سید امجد علی شاہ نے کیس کی سماعت کی۔ علی ظفر دوران سماعت عدالت میں پیش ہوئے۔آج ہونے والی سماعت میں علی ظفر بطور درخواست گزار اپنی گواہی کے لیے سیشن

عدالت میں پیش ہوئے۔ اور انہوں نے ثبوت کے طور پر مختلف میسجز ، معاہدے ، تصاویر اور سوشل میڈیا پوسٹ عدالت میں پیش کر دیں۔علی ظفر نے مبینہ منظم سازش کے حوالے سے ثبوت عدالت میں پیش کیے۔علی ظفر نے میشا شفیع کے برقی پیغامات بھی عدالت میں پیش ہوئے۔علی ظفر نے اپنے بیان میں یہ بھی کہا ہے کہ ان کے خلاف مہم چلانے والے پر ایک کا تعلق براہ راست میشاء اور اس کے نمائندہ سے ہے۔ میشا نے ایک ٹی وی شو سے پہلے پیغام بھجوایا کہ اگر میں ریکارڈنگ سے نہ نکلا تو میرے خلاف مہم چلائے گی۔علی ظفر نے میشا شفیع کے دھمکیوں والے پیغام بھی عدالت میں جمع کروائے۔گذشتہ سماعت پر علی ظفر کے آخری گواہ رضوان رئیس نے اپنا بیان قلمبند کرایا۔ گواہ رضوان رئیس نے کہا کہ میشا شفیع نے سازش کے تحت گلوکار علی ظفر پر الزام لگایا۔الزامات سے گلوکار علی ظفر کے نجی کمپنیوں سے معاہدوں کو نقصان ہوا۔ جس سے فلم ،گانے اور کنسرٹس کے معاہدے منسوخ ہوئے۔ میں نے دونوں کے درمیان کسی قسم کا ہراسگی کا معاملہ نہیں دیکھا۔ علی ظفر پر الزمات کے باعث ان کی شہرت اور ساکھ متاثر ہوئی۔ فلم سٹار علی ظفر نے میشاء

شفیع کیخلاف ہتک عزت کا دعویٰ دائر کر رکھا ہے۔ دعویٰ میں کہا گیا ہے کہ میشا شفیع نے ہراساں کرنے کے بے بنیاد الزامات عائد کئے۔ میشا شفیع نے جھوٹی شہرت کیلئے الزامات عائد کئے۔ میشا شفیع کے جھوٹے الزامات سے پوری دنیا میں شہرت متاثر ہوئی اس لئے عدالت سے استدعا ہے کہ میشا شفیع کو سو کروڑ روپے ہرجانہ ادا کرنے کا حکم دے۔





اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ ترین خبریں

دلچسپ و عجیب

بزنس