شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

زینب کے والد بھی قاتل کابےصبری سےانتظار کرنے لگے۔ زینب کے والد نےمطالبہ کیا ہے


قصور(نیو زڈیسک ) زینب کے والد بھی قاتل کابےصبری سےانتظار کرنے لگے۔ زینب کے والد نےمطالبہ کیا ہے کہ نوازشریف تعزیت کےلیے آئیں تو ساتھ قاتلوں کی گرفتاری کی رپورٹ بھی لائیں ۔تفصیلات کے مطابق زینب کے والد محمد امین نے کہا کہ تعزیت کیلئے کسی سے کوئی انکار نہیں نوا زشریف یا مریم نواز تعزیت کے لیے آئیں ان سے

ملنے سے انکار نہیں کروں گا لیکن اپنے ساتھ قاتلوں کی گرفتاری کی رپورٹ بھی لائیں۔صوبائی وزرا نے 10 سے 12 مشتبہ افراد کی گرفتاری کے ساتھ یہ دعویٰ بھی کیا ہے کہ زینب کا قاتل سیریل کلر ہے ۔ ڈی این اے 6 کیسز میں ثابت ہوچکا ۔ادھر چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے آئی جی پنجاب عارف نواز کو طلب کرکے حکم دیا ہے ۔چاہے پورے صوبے کی فورس لگانا پڑے ، زینب کے قاتل 36 گھنٹے میں گرفتار کیے جائیں ۔ زینب کے والد کے اعتراض کے بعد مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے کنوینر کو تبدیل کرکےآرپی او ملتان محمد ادریس کو لگا دیا گیا ہے ۔ دوسری طرف آئی جی پنجاب نے قصور مظاہرے میں فائرنگ سے جاں بحق ہونے والے دوافراد کی تفتیش کادائر کار بڑھادیا۔مشترکہ تحقیقاتی ٹیم میں مزید پولیس افسرانچودھری سلطان، وقاص نذیر، رانا صدیق، عمران یاسین اور غلام عابد کو شامل کردیا۔2 دن کے احتجاج کے بعد قصور میں زندگی معمول پر آنے لگی۔دکانیں ، بازار اور بیشتر تعلیمی ادارے کھل گئے جبکہ اس سے قبل سابق وزیر اعظم نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز زینب کے اہل خانہ سے تعزیت کے لیے جاتی امرا سے قصور روانہ ہو

گئے لیکن زینب کے والد نے سابق وزیر اعظم نواز شریف سے ملاقات کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ زینب کے والد نے موقف اختیار کیا کہ میری بچی کو انصاف دیا جائے، جب تک میری بچی کو انصاف نہیں ملے گا میں سابق وزیر اعظم سے ملاقات نہیں کروں گا۔ زینب کے والد نے اپنے اوپر دباؤ ڈالے جانے کی خبروں کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ مجھ پر کسی قسم کا کوئی دباؤ نہیں ہے





اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ ترین خبریں

دلچسپ و عجیب

بزنس